ایسی مجلس کا انجام جس میں نہ اللہ کا ذکر کیا جائے اورنہ ہی درود پڑھا جائے

عن جابر قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: ما اجتمع قوم ثم تفرقوا عن غير ذكر الله وصلاة على النبي صلى الله عليه وسلم إلا قاموا عن أنتن جيفة (مسند أبي داود الطيالسي، الرقم: ۱۸٦۳، ورواته ثقات كما في إتحاف الخيرة المهرة، الرقم: ٦٠٦۲)

حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ ”ایسی مجلس جہاں کچھ لوگ جمع ہوں پھر وہ وہاں سے اللہ تعالیٰ کے ذکر اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم پردرود بھیجے بغیر چلے جائیں، تو گویا کہ وہ لوگ ایک انتہائی بدبو دار مردار کے پاس جمع ہوئے اور اٹھ کر چلے گئے۔“

(ایسی مجلس جس میں اللہ تعالی کا ذکر نہیں کیا گیا اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر درود نہیں پڑھا گیا، تو اس کو انہتائی بدبو دار مردار سے تشبیہ دی گئی، جس کے قریب جانا کوئی پسند نہیں کرتا ہے)۔

ایک صحابی کی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے محبّت

ایک صحابی رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اور سوال کیا کہ قیامت کب آئےگی؟ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب دیا ”تم نے قیامت کی کیا تیّاری کی ہے؟“ صحابی نے جواب دیا: میرے پاس نفل نماز، نفل روزے اور نفل صدقات تو زیادہ نہیں ہیں؛ لیکن میرے دل میں اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی محبّت ہے۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب دیا ”بے شک قیامت کے دن تمہارا حشر ان لوگوں کے ساتھ ہوگا، جن کے ساتھ تمہیں محبّت ہو۔“ (بخاری شریف)

يَا رَبِّ صَلِّ وَ سَلِّم  دَائِمًا أَبَدًا عَلَى حَبِيبِكَ خَيرِ الْخَلْقِ كُلِّهِمِ

Check Also

حضر ت جبرئیل علیہ السلام اور رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی بد دُعا ‏

'جو بلند آواز سے درود شریف پڑھتا ہے، اس کو جنت ملے گی،' تو میں نے اور مجلس کے دیگر لوگوں نے بھی بلند آواز سے درود شریف پڑھا۔ جس کی برکت سے اللہ تعالیٰ نے ہمارے گناہوں کو معاف کر دیا اور ہم سب کو جنّت میں داخل کر دیا...