بے مروّتی اور ناشکری کی علامت

عن قتادة قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: من الجفاء أن أذكر عند رجل فلا يصلي علي (الإعلام بفضل الصلاة على النبي صلى الله عليه وسلم للنميري، الرقم: ۲٠۹، ورواته ثقات كما في القول البديع صـ ۳۱۱)

حضرت قتادہ رحمہ اللہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ ”یہ بے مروّتی اور ناشکری کی بات ہے کہ کسی شخص کے سامنے میرا تذکرہ کیا جائے اور وہ مجھ پر درود نہ بھیجے۔“

ملّا جامی رحمہ اللہ کا واقعہ

مولانا جامی رحمہ اللہ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی شان مبارک میں ایک نعت لکھی، اس کے بعد ایک مرتبہ جب حج کے لیے تشریف لے گئے، تو ان کا ارادہ یہ تھا کہ روضۂ اقدس کے پاس کھڑے ہو کر اس نظم کو پڑھیں گے۔

جب حج کے بعد مدینہ منوّرہ کی حاضری کا ارادہ کیا تو امیرِ مکّہ نے خواب میں حضورِ اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت کی۔ حضورِ اقدس صلی اللہ علیہ وسلم نے خواب میں ان کو یہ ارشاد فرمایا کہ ”اس کو (مولانا جامی کو) مدینہ نہ آنے دیں۔“ امیرِ مکّہ نے ممانعت کر دی۔ مگر اُن پر جذب و شوق اِس قدر غالب تھا کہ یہ چُھپ کر مدینہ منوّرہ کی طرف چل دیئے۔

 امیرِ مکّہ نے دوبارہ خواب دیکھا۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ”وہ آ رہا ہے اس کو یہاں نہ آنے دو۔“

امیرنے آدمی دوڑائے اور اُن کو راستہ سے پکڑوا کر بُلایا، اُن پر سختی کی اور جیل خانہ میں ڈال دیا۔

 اس پر امیر کو تیسری مرتبہ حضورِ اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت ہوئی۔ حضور صلی  اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا ”یہ کوئی مجرم نہیں؛ بلکہ اس نے کچھ اشعار کہے ہیں جن کو یہاں آکر میری قبر پر کھڑے ہو کر پڑھنے کا ارادہ کر رہا ہے، اگر ایسا ہو ا تو  قبر سے مصافحہ کے لیے ہاتھ نکلےگا جس میں فتنہ ہوگا۔“

اس پر اُن کو جیل سے نکالا گیا اور بہت اعزاز و  اکرام کیا گیا۔ (فضائل درود، ص۱۹۷)

يَا رَبِّ صَلِّ وَ سَلِّم  دَائِمًا أَبَدًا عَلَى حَبِيبِكَ خَيرِ الْخَلْقِ كُلِّهِمِ

Source: https://ihyaauddeen.co.za/?p=17212

Check Also

حضر ت جبرئیل علیہ السلام اور رسولِ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی بد دُعا ‏

'جو بلند آواز سے درود شریف پڑھتا ہے، اس کو جنت ملے گی،' تو میں نے اور مجلس کے دیگر لوگوں نے بھی بلند آواز سے درود شریف پڑھا۔ جس کی برکت سے اللہ تعالیٰ نے ہمارے گناہوں کو معاف کر دیا اور ہم سب کو جنّت میں داخل کر دیا...