اللہ تعالیٰ کی بے پایاں رحمتیں

عن ابن عمر وأبي هريرة رضي الله عنهم قالا قال رسول الله صلى الله عليه وسلم صلوا علي صلى الله عليكم (الكامل لابن عدي، الرقم: ۱۱٠۸٦، وإسناده ضعيف كما في التيسير للمناوي ۲/۹۳)

حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما اور حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ مجھ پر درود بھیجو، اللہ تعالیٰ تم پر درود(رحمتیں) بھیجیں گے۔ (الکامل ابن عدی)

وبا کے وقت درود میں مشغول ہونا

حکیم الامت مجدد الملت مولانا اشرف علی صاحب تھانوی رحمۃ اللہ علیہ نے سرورِ عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی محبت میں ایک کتاب لکھی، جس کانام “نشرالطیب فی ذکر النبی الحبیب صلی الله عليه وسلم” ہے۔ یہ کتاب عشقِ رسول صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم سے بھری ہوئی ہے اور اس کتاب کے پڑھنے سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ مصنف (مولانا اشرف علی تھانوی رحمہ اللہ) کتنے بڑے عاشقِ رسول تھے۔

 جس زمانہ میں حضرت تھانوی رحمہ اللہ یہ کتاب لکھ رہے تھے تھانہ بَھوَن (جہاں حضرت تھانوی رحمہ اللہ رہتے تھے) میں طاعون پھیلا ہوا تھا، تو دیکھا جا رہا تھا کہ جس دن حضرت تھانوی رحمہ اللہ کتاب کا کوئی حصہ لکھتے تو قصبہ میں طاعون کی وجہ سے کوئی موت نہیں ہوتی تھی اور جس دن حضرت تھانوی رحمہ اللہ کتاب کا کوئی حصّہ نہیں لکھتے تھے تو اُس دن کئی اموات ہو جاتی تھیں۔

 جب حضرت تھانوی رحمہ اللہ کو مسلسل یہ خبر پہنچی تو آپ روزانہ لکھنے لگے اور جب روزانہ سرورِ عالم صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے فضائل اور آپ کی شان کو لکھنے لگے تو وہاں اس کی برکت سے طاعون ختم ہوگیا۔

اس سے معلوم ہوا کہ درود شریف کی کثرت آفتوں اور بلاؤں کو ٹالنے کے لیے بھی اکسیر ہے اور حدیث شریف میں وارد ہے کہ ہر درود پر بندہ کے دس درجے بلند ہوتے ہیں، اس کو دس نیکیاں ملتی ہیں اور اس کے دس گناہ معاف ہوتے ہیں۔ (ماخوذ من آداب عشق الرسول صلى الله علیہ وسلم ملخصا، ص ـ ۱۱)

يَا رَبِّ صَلِّ وَ سَلِّم  دَائِمًا أَبَدًا عَلَى حَبِيبِكَ خَيرِ الْخَلْقِ كُلِّهِمِ

Source:

Check Also

قیامت کے دن نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے قریب ترین شخص

حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: قیامت کے دن مجھ سے سب سے زیادہ قریب وہ شخص ہوگا جس نے...