بیت الخلاء کی سنتیں اور آداب-٤

(۱) پیشاب، پاخانہ کے دوران بات چیت نہ کرنا الّا یہ کہ ضرورت شدیدہ ہو۔ [۱]

عن أبي هريرة رضي الله عنه قال قال رسول الله صلى الله عليه وسلم لا يخرج اثنان إلى الغائط فيجلسان يتحدثان كاشفين عورتهما فإن الله عز وجل يمقت على ذلك (مجمع الزوائد، الرقم: ۱۰۲۱) [۲]

حضرت ابو ھریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا ”دو آدمی قضائے حاجت کے لیے (ایسی جگہ) نہ جائے کہ دونوں قضائے حاجت کے دوران ستر کھولے ہوئے آپس میں بات چیت کرے، بے شک اللہ تعالیٰ کے نزدیک یہ عمل ناپسندیدہ ہے۔“

(۲) بیت الخلاء کے اندر زبان سے کسی قسم کا ذکر نہ کرنا۔ اگر چھینک آئے، تو الحمد اللہ مت کہو۔ اور اگر کوئی سلام کرے، تو جواب مت دو۔ [۳]

(۳) بیت الخلاء میں نہ کھانا اور نہ پینا۔ [۴]

Source: https://ihyaauddeen.co.za/?p=2205


] عن ابن عمر رضي الله عنهما أن رجلا مر ورسول الله صلى الله عليه وسلم يبول فسلم فلم يرد عليه (صحيح مسلم، الرقم: ٣٧٠)

(ولا يتكلم إلا لضرورة) لأنه يمقت به (مراقي الفلاح صـ ٥٢)

] رواه الطبراني في الأوسط ورجاله موثقون (مجمع الزوائد، الرقم: ١٠٢١)

] ولا يتكلم ولا يذكر الله تعالى ولا يشمت عاطسا ولا يرد السلام ولا يجيب المؤذن فإن عطس يحمد الله بقلبه ولا يحرك لسانه (الفتاوى الهندية ١/٥٠)

عن جابر بن عبد الله أن رجلا مر على النبي صلى الله عليه وسلم وهو يبول فسلم عليه فقال له رسول الله صلى الله عليه وسلم إذا رأيتني على مثل هذه الحالة فلا تسلم علي فإنك إن فعلت ذلك لم أرد عليك (سنن ابن ماجة، الرقم: ۳۵۲)

[٤] إن هذه الحشوش محتضرة (سنن أبي داود، الرقم: ٦)

 ولا يطيل القعود على البول والغائط (الفتاوى الهندية ۱/۵۰)

Check Also

مسجد کی سنتیں اور آداب – ۹

حضرت عمر و بن میمون رحمۃ اللہ علیہ سے روایت ہے کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے ارشاد فرمایا کہ ”مسجدیں زمین پر اللہ تعالیٰ کے مکانات ہیں اور میزبان کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنے مہمان کا اکرام کرے۔“۔۔۔